’ایام معدودات‘ اور’ لیلۃ القدر‘ سے مراد؟

سورہ ملک کی تلاوت سے عذاب قبر میں تخفیف
اکتوبر 30, 2018
یعلم ما فی الأرحام کی تفسیر
اکتوبر 30, 2018

’ایام معدودات‘ اور’ لیلۃ القدر‘ سے مراد؟ ِ

سوال :1-قرآن میں آیت ایام معدودات سے کیا مراد ہے ؟ ۲-لیلۃ القدر سے کیا ہے ؟ ِ

ھوالمصوب:

1-آیت میں ایام معدودات سے مراد رمضان کا مہینہ ہے ،جمہور علماء و محققین کی یہی رائے ہے ،مشہور مفسر علامہ آلوسی نے اس کی وضاحت کی ہے ،وہ لکھتے ہیں: المراد بہذہ الأیام إما رمضان واختار ذالک ابن عباس والحسن وأبو مسلم وأکثر المحققین وہو قول أحد الشافعی ……أو ثلاث من کل شہر ویوم عاشوراء علی ما روی واتفق أہل ہذا القول علی أن الواجب قد نسخ بصوم رمضان (۲) ۲-جمہور علماء نے اس کی بھی صراحت کی ہے کہ لیلۃ القدر متعین ہے ۔علامہ آلوسی نے آیت کے ذیل میں تفصیلی بحث کی ہے ،اور علماء وائمہ مجتہدین کے اقوال نقل کئے ہیں ،وہ اس سلسلہ میں لکھتے ہیں : والأکثرون علی أنہا فی شہر رمضان فعن ابن رزین أنہا لیلۃ الأولی منہ عن الحسن البصری السابعۃ عشر وحکی عن زید ابن ارقم وابن مسعود ایضاً وعن محمد ابن اسحق الحادیۃ والعشرون لما فی الصحیحین وغیرہما ……وأخرج أحمد والبخاری ومسلم والترمذی عن عائشۃقالت قال رسول ﷲ ﷺ تحروا لیلۃ القدر فی الوتر من العشر الأواخر من شہر رمضـان……وبالجملۃ الاقوال فیہا مختلفۃ جدا الا أن الأکثرین علی أنہا فی العشر الأواخر لکثرۃ الاحادیث الصحیحۃ فی ذالک(1) تحریر:محمد ظفر عالم ندوی

تصویب:ناصر علی ندوی